صفحہ اول / بلاگ / ہم اپنے بچوں کے انٹرنیٹ کو محفوظ کیسے بنا سکتے ہیں ؟

ہم اپنے بچوں کے انٹرنیٹ کو محفوظ کیسے بنا سکتے ہیں ؟

خبریں دیکھ کر ہمیں  پتہ چلتا ہے کہ اِنٹرنیٹ کے ذریعے بہت سے لوگ دوسروں کو اپنی جنسی ہوس کا شکار بناتے،‏ لوگوں کی شناختچوری کرتے یا اُن کو دھمکاتے ہیں۔‏ آپ بہت پریشان ہیں کیونکہ آپ کا نوجوان بچہ اکثر اِنٹرنیٹ اِستعمال کرتا ہے اور ایسا لگتا ہے کہ وہ اِن خطروں سے واقف نہیں ہے۔‏

لیکن گھبرائیں نہیں۔‏ آپ اپنے بچے کو سکھا سکتے ہیں کہ وہ اِنٹرنیٹ پر احتیاط کیسے برت سکتا ہے۔‏ لیکن اِس کے لیے ضروری ہے کہ آپخود اِنٹرنیٹ کے بارے میں کچھ حقائق سے واقف ہوں۔‏

 

کچھ حقائق پر غور کریں

نوجوان صرف کمپیوٹر کے ذریعے اِنٹرنیٹ اِستعمال نہیں کرتے۔‏ سچ ہے کہ اگر گھر میں کمپیوٹر کسی ایسی جگہ پر رکھا گیا ہے جہاں سب گھر والوں کا آناجانا لگا رہتا ہے تو آپ دیکھ سکتے ہیں کہ بچے اِنٹرنیٹ پر کیا کر رہے ہیں۔‏ لیکن اگر بچوں کے پاس اِنٹرنیٹ والا ٹلبیٹ کمپیوٹر یا موبائل ہے تو وہ ایسی جگہ پر بھی اِنٹرنیٹ اِستعمال کر سکتے ہیں جہاں آپ اُن پر نظر نہیں رکھ سکتے
کچھ نوجوان اِنٹرنیٹ پر بہت زیادہ وقت صرف کرتے ہیں۔‏ ایک 19 سالہ لڑکی کہتی ہے:‏ ”‏مَیں سوچتی ہوں کہ مَیں صرف پانچ منٹ کے لیے اپنی ای‌میل چیک کروں گی۔‏ لیکن پھر ہوتا یہ ہے کہ مَیں اِنٹرنیٹ پر کئی گھنٹے ویڈیوز دیکھتی رہتی ہوں۔‏ مجھے اِس عادت پر قابو پانا بہت مشکل لگتا ہے۔‏“‏

نوجوان اکثر اِنٹرنیٹ پر اپنے بارے میں ضرورت سے زیادہ معلومات دے دیتے ہیں۔‏ نوجوان اِنٹرنیٹ پر جو تبصرے لکھتے ہیں اور جو تصویریں ڈالتے ہیں،‏ اُن کے ذریعے مُجرم اندازہ لگا سکتے ہیں کہ یہ نوجوان کہاں رہتا ہے،‏ کس سکول میں جاتا ہے اور کس وقت اُس کے گھر پر کوئی نہیں ہوگا۔‏

بعض نوجوان یہ نہیں سوچتے کہ اِنٹرنیٹ پر کچھ ڈالنے کا کیا نتیجہ نکل سکتا ہے۔‏ اِنٹرنیٹ پر جو کچھ ڈالا جاتا ہے،‏ وہ وہاں پر ہمیشہ رہتا ہے۔‏ کچھ تبصروں یا تصویروں کی وجہ سے نوجوانوں کو شاید بعد میں نقصان اُٹھانا پڑے۔‏ مثال کے طور پر یہ اُس وقت مسئلہ بن سکتا ہے جب وہ ملازمت کے لیے درخواست دیتے ہیں اور کمپنی کا مالک اِنٹرنیٹ پر اُن کے بارے میں معلومات تلاش کرتا ہے۔‏

سچ ہے کہ اِنٹرنیٹ کی وجہ سے کچھ مسئلے پیدا ہو سکتے ہیں لیکن یاد رکھیں کہ اِنٹرنیٹ آپ کا دُشمن نہیں ہے۔‏ مسئلہ صرف اُس وقت پیدا ہوتا ہے جب اِسے سمجھ‌داری سے اِستعمال نہیں کِیا جاتا۔‏

آپ کیا کر سکتے ہیں؟‏

بچے کو سکھائیں کہ وہ اہم کام پہلے کرے اور وقت کا صحیح اِستعمال کرے۔‏ ذمےدار بننے میں یہ بات شامل ہے کہ اِنسان اہم کاموں کو سب سے پہلے کرے۔‏ گھر والوں کے ساتھ وقت گزارنا،‏ سکول کا کام کرنا اور گھر کا کام‌کاج کرنا اِنٹرنیٹ پر بِلاوجہ وقت صرف کرنے سے زیادہ اہم ہے۔‏ اگر آپ کا بچہ اِنٹرنیٹ پر بہت زیادہ وقت صرف کرتا ہے تو اُسے بتائیں کہ وہ کتنی دیر کے لیے اِنٹرنیٹ اِستعمال کر سکتا ہے۔‏ اور پھر الارم لگا دیں تاکہ آپ دونوں کو پتہ چل جائے کہ اِنٹرنیٹ اِستعمال کرنے کا وقت پورا ہو گیا ہے

بچے کو سکھائیں کہ وہ سوچ‌سمجھ کر اِنٹرنیٹ پر معلومات ڈالے۔‏ بچے سے کہیں کہ وہ اِنٹرنیٹ پر کوئی معلومات ڈالنے سے پہلے خود سے ایسے سوال پوچھے:‏ ”‏جو تبصرہ مَیں لکھ رہا ہوں،‏ کیا اُس سے کسی کے جذبات کو ٹھیس پہنچے گی؟‏ اِس تصویر سے میری نیک‌نامی پر کیا اثر پڑے گا؟‏ اگر میرے ماں‌باپ یا بڑوں میں سے کوئی اَور اِس تصویر یا تبصرے کو دیکھے گا تو مجھے کیسا لگے گا؟‏ اِسے دیکھ کر وہ میرے بارے میں کیا سوچیں گے؟‏ اگر کوئی اَور شخص ایسی تصویر ڈالے یا ایسا تبصرہ لکھے تو مَیں اُس شخص کے بارے میں کیا سوچوں گا؟“
بچے کو سکھائیں کہ وہ صرف قوانین کے مطابق نہیں بلکہ قدروں کے مطابق بھی زندگی گزارے۔‏ آپ ہر وقت اپنے بچے پر نظر نہیں رکھ سکتے۔‏ اِس لیے ضروری ہے کہ آپ اُسے ”‏نیک‌وبد میں اِمتیاز“‏ کرنا سکھائیں۔‏ یہ ضروری ہے کہ آپ اپنے بچے کو بتائیں کہ فلاں کام کرنے پر اُسے کیا سزا ملے گی لیکن اِس سے بھی زیادہ ضروری یہ ہے کہ آپ اُسے اِس بات پر غور کرنے کی ترغیب دیں کہ وہ کن قدروں کے مطابق زندگی گزارنا چاہتا ہے۔‏ اِس کے لیے آپ اُس سے ایسے سوال پوچھ سکتے ہیں:‏ ”‏آپ کس طرح کی پہچان بنانا چاہتے ہیں؟‏ آپ کن خصوصیات کی وجہ سے مشہور ہونا چاہتے ہیں؟‏“‏ اِس طرح آپ اپنے بچے کو سکھا سکتے ہیں کہ وہ آپ کی غیرموجودگی میں بھی اچھے فیصلے کرے
ا نٹرنیٹ اِستعمال کرنا گاڑی چلانے کی طرح ہے۔‏ گاڑی چلاتے وقت صرف مہارت کی ضرورت نہیں ہوتی بلکہ سمجھ‌داری سے کام لینے اور احتیاط برتنے کی ضرورت بھی ہوتی ہے۔‏ یہ باتیں اِنٹرنیٹ کے اِستعمال پر بھی لاگو ہوتی ہیں۔‏ اِس لیے یہ اشد ضروری ہے کہ اِنٹرنیٹ کے اِستعمال کے سلسلے میں آپ اپنے بچے کی رہنمائی کریں۔‏ اِس بارے میں پری آفتاب کے بیان پر غور کریں جو اِنٹرنیٹ کو احتیاط سے اِستعمال کرنے پر تحقیق کرتی ہیں۔‏ وہ کہتی ہیں:‏ ”‏نوجوان ٹیکنالوجی کا تجربہ رکھتے ہیں جبکہ والدین زندگی کا تجربہ رکھتے ہیں۔‏“

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے